Sunday, June 18, 2017


وہ ہستی جسے میں نے شِدّت سے، ٹُوٹ کر، بِکھر بِکھر کر، سِمٹ سِمٹ کر چاہا، جن کی محبت میرے وجود کا نہ جدا ہونے والا حصہ ہے، جن سے وابستہ مری ہر کہانی، ہر قِصہ ہے
جن کا تصور میرے دل ودماغ میں پوشیدہ و نِہاں خیالات واحساسات پہ ہر لحظہ و لمحہ چھایا رہتا ہے، جن کا خیال مرے شب و روز کو جِلا بخشتا ہے، جن کے ہِجر میں ہر عاشِق کا دل دن رات تڑپتا ہے، جِن کی یاد سے ہر گُلشن و چمن کا اِک اِک غنچہ مہکتا ہے، جِن کے تذکرے پر چرند و پرند میں سے ہر کوئی چہکتا ہے، ہر شجر و حجَر لہکتا ہے، جِن کے عِشق کی آگ میں بندۂِ مومِن کا دل ایسے دہکتا ہے کہ جہنم کی آگ کو سرد کر دیتا ہے، عِشق کی بھی ایسی شان کہ ان سے دور لے جانے والی ہر شے کو گرد کر دیتا ہے

اپنا یہ کلام اُنہی کے نام جن کے ہم غلام ہیں جو خود نہ صرف خیر الانام ہیں بلکہ ساری کائنات، ساری اِنسانیت کے لیے وجۂِ عزت واحترام ہیں، باعثِ عنایات و اکرام ہیں
جِن کے مقام و مرتبے کا اِدراک انسانی حواس کے بس کی بات نہیں، یہ تو علِیم و خبِیر پروردگار ہی بہتر جانتا ہے کہ اُس نے آپ کو کسقدر اعلی وارفع مقام پر فائز کیا
آپ کی مدحت و نعت کا حق ادا کرنا اس عاجز و ناتواں کے بس میں کہاں کہ کہاں میں خاک نشیں کہاں وہ جس کا تصور از خود فردوسِ بریں، بہر حال وہ راحۃ العاشقِین، مُرادُ المشتاقِین، رحمۃُ العالمِیں، از خود برہانِ مُبیں من ربُ العالِمیں
کرتے ہیں سر تسلیم خم، کر دو للہ کرم، ہمیں بھی عطا ہو ایسا قلم، جو مصروفِ ثناء و توصیف رہے ہر دم، اے شافعِ امم، دافعِ البلاءِ والالم، صاحب ذِی الجودِ و الکرم
کہاں میں حقیر و کم تر کہاں وہ بعد از خدا بزرگ و برتر
کلام و تحریر: اسد قیوم بابؔر

ترے بارے میں جو کلام کرتے
ہم بھی کوئی عُمدہ کام کرتے


تُجھ سے شروع تُجھ پہ اختتام کرتے
تری جستجو میں عمر تمام کرتے


روز ترے نام پہ جیتے و مرتے
اپنی وابستگی کا کچھ ایسے اہتمام کرتے


اپنا سب کچھ محبوبِ جاں کو سونپ کر
محبتوں کے سبھی جذبے اُسں کے نام کرتے


تری یاد سے مہکتا رہتا غنچۂ دل
اُسے تری چاہت و اُلفت کا مقام کرتے


یہاں وہاں، ہر سُو، ہر جا ترے جلوے
ترا تذکرہ و چرچا صُبح و شام کرتے


تذکرۂ حسن جب بھی کہِیں کوئی چھیڑتا
عُشاق متوجہ خود کو رخِ خیر الانام کرتے


اے قاسِم و مُنعم! ترے ٹکڑوں پہ پلنے والے
بھلا وہ کیوں اور کوئی حسرتِ خام کرتے


ٹھوکریں کھاتے بھلا در بدر کیسے
آپ جو نگاہِ کرم و لطفِ عام کرتے


کرتے جسم وجاں ترے قدموں کا طواف
عُشاق جو ترے شہر میں قیام کرتے


کرتے اپنا خمیر خاکِ کوچۂِ دلدار کے سپرد
اور پِھر تا حشر وہِیں سکون و آرام کرتے


مِل جاتا جو اِذنِ سفر و شرفِ باریابی
اسد غلام روضۂِ اقدس پہ پیش سلام کرتے

No comments:

Post a Comment