Saturday, September 06, 2014

!سنو بھی : ذرا کھل کر ' ذرا ہٹ کر


میرے دیس میں ان دنوں
شور بپا ہے چاروں طرف
' ہم بدلیں گے پاکستان '

نعرہ سب کا ایک سا ہے
سب سے بڑھ  کر نوجوان نسل آگے آگے دوڑ رہی ہے
اسلام کو تو چھوڑ رہی ہے اغیار سے سب کو جوڑ رہی ہے 

ان نوجوانوں کو کوئی بتائے
نہ لا سکا ہے انقلاب کوئی
چھوڑ کر اپنے اسلاف کی روش کو
اور جن کو سمجھتے ہو تم مسیحا
ان کا حال تو ذرا سن لو
اہل ہوس میں گرم ہے پھر جنگ اقتدار
شعلوں کی زد میں سارا گلستاں ہے دوستو

   وقت گزاری کے لئے لکھ رہا ہوں کیوں کہ جانتا ہوں میرے لفظوں میں وہ تاثیر نہیں کہ آپ لوگوں کے دلوں کو پھیر دے -  موضوع سیدھا سادہ سا ہے  انگریزی فلمیں   انگریزی گانے ' انڈین فلمیں  انڈین گانے ' پاکستانی فلمیں   پاکستانی گانے - نوجوان نسل بلخصوص طبقہ اشرفیہ ' اپر مڈل کلاس اور مڈل کلاس کی نوجوان نسل مکمل طور پر رسیا ہو چکی ان خرافات کی - اور اس دلدل سے نکلنا ہوا مشکل -

  میں آپ کے سامنے قرآن و حدیث بلکل نہیں پیش کروں گا - کیوں کہ اگر میں نے پیش کر دیا اور کسی کے ماتھے پر ذرا سی شکن بھی آ گئی تو اس کی پکڑ سخت ہو گی کیوں کہ ہم مسلمان تبھی کہلاتے ہیں جب قرآن و حدیث پر دل و جان سے کم از کم ایمان تو رکھیں ' عمل بعد کی بات - 

  اس لئے میں اک نئے انداز سے آپ تک پہنچاؤں گا اپنے دل کی آواز (سوز و غم بھی که سکتے ہیں )اک ہوتا ہے ہیرو اور اک ہوتی ہے ہیروئین ' مرکزی کردار کسی بھی فلم کے - ٩٩% فلموں میں عشق و محبت و پیار و الفت  وغیرہ ہی بنیادی اجزا ہوتے ہیں -  کردار و الفاظ بہت  سوچ سمجھ کر سلیکٹ کئے جاتے ہیں تا کہ ناظرین زیادہ سے زیادہ محظوظ ہو سکیں اور پھر گانے کے بول تو سونے پر سہاگے کا کام کرتے ہیں - اور گانے کے دوران کی حرکات و سکنات تو آسمان پر پہنچا دیتی ہیں ناظرین کو - 

  الله تعالیٰ نے مرد ذات میں شہوت کے مادے کو عورت ذات سے زیادہ قوی بنایا ہے - قدرتی طور پر مرد ذات  میں عورت ذات کی خواہش رکھ دی گئی - اسی لئے اس کی ایک مثال جو کہ بہت بری ہے وہ ہے زنا با لجبر ' یہ تبھی انسان کرتا ہے جب شہوت پر کنٹرول کھو دیتا ہے - باقی اس بات سے انکار نہیں کہ عورت میں شہوت ہوتی ہی نہیں ' بلکل موجود ہوتی ہے مگر اس پر کئی اور چیزیں غالب ہوتی ہیں - تفصیل کسی اور موقع پر ' ابھی موضوع پر واپس آتا ہوں - مختصرا میری قوم کے نوجوان اسی لئے فلمیں دیکھتے گانے سنتے ایسی محافل میں جاتے ایسی محافل سجاتے - فلموں میں سب سے پسندیدہ مناظر گانے کے دوران والے ہوتے ہیں - اور خاص کر وہ گانا جس میں لفظوں اور حرکات میں مطابقت پائی جاتی ہو -  اور میری قوم کے نوجوان لڑکوں کی نظریں ہیرو پر بہت کم اور ہیروئن پر بہت دیر جمی رہتی ہیں گانے کے دوران - 

   ظاہر ہے مرد ذات یا نوجوان لڑکا ' ہیروئن کو اسی لئے دیکھتا ہے کہ وہ خوبصورت ' وہ پر کشش ' اس کا نسوانی حسن ' اس کے مختصر ترین کپڑے' اس کا چھلکتا جسم   - اتنی منظر کشی کافی ہے - - اب یہاں پر خاص نقطہ یہ ہے کہ کیا وہ تمام حضرات اس ہیروئن کی جگہ اپنی بیوی ' بیٹی ' بہن یا ماں کو دیکھنا پسند کریں گے  ؟(کیا وہ لوگ یہ کام اپنی عورتوں کو کرنے کی اجازت دیں گے ؟؟ ( ہر ہفتے کسی اور کی باہوں میں دوسروں کی عورتوں کو دیکھ کر خوش ہونے والے ' لذت اٹھانے والے ' محظوظ ہونے والے ' آنکھوں کی ٹھنڈک پانے والے  کیوں نہیں  اپنے گھر والوں کو ویسا کرنے دیتے ؟ 

  اب آتے ہیں نوجوان لڑکیوں کی سوچ کی طرف ' میرے خیال سے نوجوان لڑکیاں ہیرو پر زیادہ نظریں مرکوز کرتی ہوں گی ( میرا خیال غلط بھی ہو سکتا ہے) مگر یہاں اک بات اچھی ہے کہ ہیرو کے زیادہ تر کپڑے پورے ہی ہوتے ' ستر چھپا ہی ہوتا  سو لڑکیاں ' لڑکوں کی نسبت کم گناہ لکھوا پاتیں اب ذرا یہ مسلم لڑکیاں ہیروئن کی جگہ خود کو رکھیں اور سوچیں  کہ ہر ہفتے اک نیا غیر مرد آپ کے ساتھ ہو اور پوری دنیا آپ کو دیکھے (ہیروئن ہوتی نا آپ ) - پھر وہ تمام مناظر سوچیں ذرا آپ کہ آپ کے ساتھ ہیرو بھی وہی کچھ کر رہا ہو - - میں تو صرف لکھ رہا ہوں ہو سکتا ہے آپ کا پارہ چڑھ رہا ہو کہ کیا بکواس کر رہا ہوں - مگر مجبورا آپ سب خواتین و حضرات کو ماننا پڑے گا کہ میں غلط کچھ بھی نہیں که رہا -
  
  فلمیں دیکھنے اور گانے سننے کا رائی کے دانے کے برابر بھی مثبت احتمال نہیں نکالا جا سکتا نہیں بتایا جا سکتا -
بحثیت اک کمزور ترین درجے والا مسلمان ہو کر بھی ہم سب میں سے کوئی بھی فلمیں دیکھنے اور گانے سننے کا دفاع نہیں کر سکتا -  اگر اسلامی نقطہ نظر کو سائیڈ پر رکھ کر اوپر بیان کئے گئے سوالات کے جوابات آپ میں سے کوئی دے سکتا ہے تو اس کا ایک ہی طریقہ ہے کہ اپنا عمل دکھا دے  کہ یہ دیکھو میرے گھر کی عورتیں یہ یہ کر رہیں ' اور اگر لڑکیاں جواب دینا چاہیں تو وہ بھی اپنے ہر ہفتے کے ہیرو کا نام بتا دیں - 

 فلمیں اور گانے چاہے وقت گزاری کے لئے دیکھیں اور سنیں مگر اثر ضرور ہو گا - وہ اثر جو کہ آپ خود نہیں چاہتے کہ ہو اصل میں مگر ذرا ان پہلوؤں پر غور کریں شائد کہ آپ تبدیلی لانے کے قابل ہو جائیں -

بات ختم کرتا ہوں اقبال کے اس شعر کے ساتھ 
چاہتے سب ہيں کہ ہوں اوج ثريا پہ مقيم
پہلے ويسا کوئي پيدا تو کرے قلب سليم




No comments:

Post a Comment